صحت

غذاؤں کے ذریعے موذی امراض سے بچا و، کیلا کھانے سے کن موذی امراض سے بچا جا سکتا ہے

bnana

سچ بول چال آن لائن bnana for health – such bool chaal
رحیم یارخان (ویب ڈیسک) روزمرہ غذاؤں کے ذریعے فالج اور دل کے اٹیک جیسے موذی امراض کیسے بچا سکتا ہے ۔ فالج اور دل کے اٹیک جیسی بیماریاں آج کل اس قدر عام ہو چکی ہیں کہ; ہر تیسرے گھر میں کوئی نہ کوئی فرد ان بیماری میں مبتلا نظر آتا ہے; اور یہ موذی امراض ایک بار اگر کسی انسان کو لگ جائیں تو عمر بھر انسان ان سے چھٹکارہ حاصل نہیں پاتا. تو کیوں نہ ہم اپنی روزمرہ کی غذاوں میں ایسی چیزوں کو حصہ بنائیں; جو ان بیماریوں سے دور رکھنے میں مددگار ثابت ہوں۔

میل آن لائن کے مطابق یونیورسٹی آف الباما کی نئی تحقیق میں یہ انکشاف ہوا ہے کہ; کیلے کا باقاعدہ استعمال انسان کو ;فالج اور دل کی بیماری; سے محفوظ رکھنے میں مد د گار ثابت ہوتا ہے۔ ماہرین کہتے ہیں کہ اس میں پوٹاشیم بکثرت پایا جاتا ہے; پوٹاشیم ایک ایساہ مادہ ہے جو تنگ اور سخت شریانوں کو کھول دیتا ہے۔ شریانوں کی بندش اور شریانوں میں سختی آ جانے وجہ زیادہ تر فالج اور دل کی بیماری کا سبب بنتی ہے۔

غذاؤں کے ذریعے پوٹاشیم

پوٹاشیم کی مناسب مقدار دستیاب ہوجائے تو شریانوں میں یہ مسئلہ پیدا نہیں ہوتا۔ تحقیق کاروں کے مطابق; اگر انسان روزمرہ غذاؤں کے ذریعے پوٹاشیم حاصل کرتا رہے; تو ان بیماریوں سے کافی حد تک بچا جا سکتا ہے; اگر روزمرہ کی غذاوں کے ذریعے پوٹاشیم کو حاصل کرنے کی بات کی جائے; تو کیلا ان غذاوں میں سرفہرست ہے; جو وافر مقدار میں انسانی جسم کو پوٹاشیم فراہم کرتی ہیں۔

مزید پڑھیں : شوگر کے مریضوں کے لئے کون سی غذا بہتر ہے، روٹی یا چاول؟ ٹیبلٹس یا انسولین

تحقیق کے سربراہ سائنسدان ڈاکٹر سینڈرز کے مطابق :کیلے میں پائی جانے والی پوٹاشیم تیزی سے جوزوبدن ہو جاتی ہے ;اور بہت جلد ہی اس کے مثبت اثرات نظر آنا شروع ہو جاتے ہیں۔ ڈاکٹر سینٹرز کا مزید کہنا تھا کہ فوڈ سپلیمنٹ کے طورپر;اگر پوٹاشیم استعمال کیا جائے تو کیلے کی صورت میں اس کا استعمال قدرتی اور زود اثر ہے ۔
اس تحقیق کو سائنسی جریدے; جرنل آف کلینیکل انویسٹیگیشن; میں شائع کیا گیا ہے.

سچ بول چال آن لائن bnana for health – such bool chaal

مزید پڑھیں : زکام سے فوری چھٹکارا حاصل کرنا چاہتے ہیں تو اس سادہ سے نسخہ پر عمل کریں

sbconline1 Health news



To Top